ہنگری نے پناہ گزینوں کے پناہ لینے اور تحفظ تک رسائی کے حقوق کو محدود کر دیا ہے

ہنگری نے ایک نئے قانون کو اپنایا ہے جو مہاجرین، پناہ گزینوں یا تارکین وطن کی مدد کرنے کو جرم سمجھتا ہے.

اس کا مطلب یہ ہے کہ کوئی بھی - وکلاء سے معاشرے کے رضاکاروں تک - جو پناہ گزینوں کی مدد کرتا ہے، چاہے وہ فارم بھرنا، قانونی مشورہ یا پناہ گزین کے عمل پر معلومات ہوں، کو سزا دے گا.

سزا عارضی طور پر قید سے لے کر 1 سال تک قید یا ملک بدر کی حد تک ہوسکتی ہے. حکام ٹرانزٹ زونوں اور سرحدی علاقوں میں جانے سے کسی بھی ایسے شخص کو روک دیں گے جس پر اس نئے قانون کی خلاف ورزی کا الزام ہے. یہاں تک کہ اسے سزا بھی نہ ہوئی ہو.

آپ اس قانون کو "سٹاپ سوروس" "Stop Soros" قانون کے حوالے سے بھی سن سکتے ہیں، یہ ہنگری-امریکن ارب پتی شخص George Soros کے نام سے منصوب ہے جو پناہ گزینوں کی حمایت کرنے والی تنظیموں کی مالی مدد کرتا ہے، اور ہنگری کے وزیر اعظم وکٹر اوربان کی دائیں بازو کی جماعت کی طرف سے اکثر شدید مذمت کا شکار ہوتا ہے.

یہ کس طرح پناہ کے متلاشی کے طور پر میرے قانونی حقوق کو متاثر کرتا ہے؟

نیا قانون ہنگری میں تحفظ حاصل کرنے سے زیادہ تر پناہ گزینوں پر پابندی عائد کرتا ہے. جیسا کہ انسانی حقوق کے اداروں اور وکیلوں پر اب سرحدی علاقوں اور ٹرانزٹ زونوں میں داخلے پر پابندی ہے، تو قانونی امداد تک رسائی حاصل کرنے کے لئے زیادہ مشکل ہو گی.

عملی طور پر، قانون آپ کی پسند کے وکیل سے معلومات اور قانونی نمائندگی حاصل کرنے کا حق محدود کرتا ہے - جو آپ کے منصفانہ مقدمے کی سماعت کے حق کی خلاف ورزی ہے۔ یہ آپ کو قانونی نظام تک پہنچنے یا پناہ گزینی کے منفی فیصلے کی اپیل کرنے سے مؤثر طریقے سے روکتا ہے.

اگرچہ، آپ اپنے پناہ گزینی کے منفی فیصلے کی اپیل کرسکتے ہیں، آپ کے پاس صرف 3 دن ہیں.

یہ مجھے پناہ کے متلاشی کے طور پر اور کیسے متاثر کرتا ہے؟

نئے قانون اور آئینی ترمیم کے مطابق، ہنگری میں آنے والے صرف وہ لوگ جو اس جگہ سے جہاں ان کی زندگی یا آزادی خطرے میں ہے، سے براہ راست آرہے ہیں، پناہ گزینی کے لئے درخواست دے سکتے ہیں.

اگر آپ ایک ایسے ملک کے ذریعہ ہنگری میں آتے ہیں جہاں آپ کو پریشان نہیں کیا گیا جیسے سربیا، بلغاریہ یا بوسنیا تو، پناہ کے حکام آپ کو خود بخود تحفظ سے انکار کردیں گے اور آپ کا دعوی نہیں دیکھیں گے۔

اس کا مطلب یہ ہے کہ حکام سب سے پہلے اس کی جانچ پڑتال کریں گے کہ آپ کا اصل ملک محفوظ ہے جہاں سے آپ آئے ہیں، یا ہنگری میں پہنچنے سے پہلے آپ کسی محفوظ ملک کے ذریعے آئیں ہیں. ہنگری ہیلسینکی کمیٹی (ایچ ایچ سی) جو ایک قانونی تنظیم ہے، اس کو "ناقابل داخلہ طریقہ کار" “inadmissibility procedure" کہتے ہیں.

ایچ ایچ سی کے مطابق، حکام اس عمل کے دوران آپ کے پناہ گزینی کے دعوی کی اہلیت کا جائزہ نہیں کرتے ہیں. یہ صرف تب ہوتا ہے جب حکام اس بات کا تعین کرتے ہیں کہ آپ اس ملک سے براہ راست آئے ہیں جہاں آپ کی زندگی خطرے میں تھی، تب وہ آپ کو پناہ کے لۓ درخواست دینے کی اجازت دیتے ہیں.

مندرجہ ذیل ممالک ہنگری میں محفوظ ممالک کا درجہ رکھتے ہیں:

نئی تبدیلیوں کے مطابق جو 28 مارچ 2017 کو لاگو ہوئیں، آپ صرف سربیا کے ساتھ سرحد پر واقع دو ٹرانزٹ زونوں میں پناہ طلب کرسکتے ہیں. تاہم، سربیا، ہنگری کے مطابق ایک محفوظ تیسرا ملک ہے، اور اس طرح، آپ پناہ کے لئے درخواست نہیں کرسکتے جب تک کہ آپ کی زندگی خطرے میں نہیں ہے.

اگر وہ آپ کی درخواست کو اوپر دی گئی وجوہات کی بنا پر ناقابل قبول کرتے ہیں، تو آپ کو ٹرانزٹ زون میں اس بات کی وضاحت کرنے کا حق ہے کہ آپ کی درخواست کیوں قبول کی جانی چاہیے. آپ عدالت میں داخلہ نہ دینے کا فیصلہ بھی چیلنج کرسکتے ہیں.

مجھے قانونی مدد کہاں سے مل سکتی ہے؟

اگر آپ ہنگری آفس آف امیگریشن اور پناہ گزین کے ساتھ پناہ کے لئے درخواست کرتے ہیں تو آپ ہنگری ہیلسینکی کمیٹی (ایچ ایچ سی) سے آزاد قانونی مدد کی درخواست کر سکتے ہیں. آپ ٹرانزٹ زون میں داخل ہونے کے فورا بعد کسی بھی زبان میں ایچ ایچ سی سے وکیل کی درخواست کرسکتے ہیں.

ایچ ایچ سی کے وکیل اپنے ان گاہکوں اور پناہ گزینوں کی مدد کر سکتے ہیں جو خاص طور پر ٹرانزٹ زونز میں مدد کی درخواست کرتے ہیں.

یہ نیا قانون "ہنگری کی فہرست" کو کیسے متاثر کرتا ہے؟

اسی دن جب یہ قانون اپنایا گیا تھا، ہنگری کے حکام نے سربیا سے پناہ کے متلاشیوں کے داخلے کو عارضی طور پر روک دیا. عارضی معطلی اب ختم ہو گئی ہے. تاہم، ہم فہرست اور عمل کے بارے میں سرکاری معلومات حاصل کرنے میں کامیاب نہیں ہوئے.

جنوری 2018 کے بعد سے، ایک دن میں اوسطً 2 افراد ہنگری میں پناہ کی درخواست جمع کرانے کے لیے ٹرانزٹ زون میں داخل ہوسکتے ہیں۔

بین الاقوامی برادری ہنگری کو ہمارے انسانی حقوق کی خلاف ورزی سے کیوں نہیں روک رہی ہے؟

ہنگری کی پارلیمان کی طرف سے قانون سازی منظور کرنے سے پہلے، یورپ کی کونسل، اقوام متحدہ اور اقوام متحده کے انسانی حقوق کے کمشنر نے ہنگری حکومت سے درخواست کی کہ اس قانون کے ساتھ آگے نہ بڑھا جائے. ہنگری نے ان کی کالوں کو نظر انداز کیا.

ہنگری کی پارلیمنٹ نے 20 جون کو عالمی پناہ گزینی کے دن قانون سازی کی - وینیس کمیشن، جو آئینی معاملات پر یورپ کی مشاورتی کونسل ہے، میں مسودہ کی جانچ پڑتال اور بحث سے صرف دو دن پہلے،

ہنگری کے صدر جانوس ایڈر کے بل پر دستخط کرنے کے بعد یہ جولائی 1 کو نافذ کیا.

جہاں حکومت نے دعوی کیا کہ انہوں نے قانون کو سرحد کو محفوظ بنانے اور اسمگلنگ کو روکنے کے لئے قانون تشکیل دے دیا، یہ لوگوں کی تحفظ تک رسائی کو روکتا ہے اور ان لوگوں کو سزا دیتا ہے جو پناہ گزینوں کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرتے ہیں.

یہ ان انسانی حقوق کی جن کی یورپی یونین کا کنونشن برائے بنیادی حقوق اور یورپی یونین کا چارٹر برائے بنیادی حقوق حفاظت کرتا ہے، کی خلاف ورزی کرتا ہے، اور اس طرح یہ ہنگری کے گھریلو قانون کے بھی خلاف ہے.

جولائی کے وسط میں، یورپی کمیشن نے ہنگری کو یورپی یونین کی اعلی عدالت، یورپی کورٹ کے جسٹس (ای سی جے) کے حوالے کرنے کا فیصلہ کیا کیونکہ وہ یورپی یونین کے پناہ گزینوں کے قوانین کو پورا کرنے میں ناکام رہا۔ یہ قانونی درخواست ہنگری پر ای سی جے کی طرف سے مالی پابندیاں عائد کرسکتی ہے.

ہیومن رائٹ واچ اور ایمنٹی انٹرنیشنل جیسے دیگر انسانی حقوق کے ادارے بھی ہنگری کے نئے قانون کے خلاف کھڑے ہو رہے ہیں.

اگر آپ اپنی پناہ کے کیس میں ہنگری میں قانونی مدد حاصل کرنا چاہتے ہیں تو، آپ ہنگری ہیلسینکی کمیٹی کو ای میل یا فیس بک پر پیغام بھیج سکتے ہیں.

کور فوٹو © یو این ایچ سی آر/ سولٹ بالا